88

سانحہ ساہیوال و خیسور

شمالی وزیرستان تحصیل میرعلی کے علاقہ خیسورہ اور پنجاب کے علاقے ساہیوال میں جو کلیجہ پھاڑ واقعہ پیش ہوا جس کی تفصیل سے قلم انکار کرتا ہے اس واقعے کو اگر پاکستان کے سیاہ تاریخ کے تناظر میں دیکھا جائے تو کوئی انوکھا واقعہ نہیں ہے ، برطانیہ سے وراثت میں ملی ہوئی یہ فوج مسلسل آج تک ہر مقام پر سیاہ کارئیوں میں ملوث آرہی ہے۔ یہی وہ فوج ہے جس نے بنگال میں بنگالیوں کی عصمتوں سے کھیل کر بنگال کو پاکستان سے جدا کردیا، یہی وہ فوج ہے جس نے فلسطینی مسلمانوں کی کیمپوں پر بمباری کرکے ان کا ستیاناس کیا یہی وہ فوج ہے جب برطانیہ کو خلافت عثمانیہ ختم کرنے کی ضرورت پڑی تو برطانیہ کے صف اول کا سپاہی بنی ، یہی وہ فوج ہے جب نائن ایلیون کے بعد امریکہ کو افغانستان کے مسلمانوں کو کچلنے کی ضرورت پڑی تو یہ فرنٹ لائن اتحادی بنی، یعنی ان کا کام ہی کرائے کا سپاہی بن کر مسلمانوں کو ختم کرنا ہے، ان کی عزت آبرو کے ساتھ کھیلنا ہے اور جب قبائل اور پختون کے خون میں ڈالر کی تصویر نظر آئی تو وحشی درندے کی طرح معصوم قبائل اور پختون قوم کا خون بہانا شروع کیا اور بالآخر یہ سفاک فوج پہنچ گئی کہ قبائل کے گھروں میں گھس کر ان کی عزت وآبرو پر ہاتھ ڈالنے لگی۔
تحریک طالبان پاکستان فوج سے اپنی ماوں بہنوں کی عزت وآبرو کی دفاع کی خاطر اس ظالم مکار اور بے حیا فوج کے خلاف برسرپیکار ہے ۔ اور الحمدللہ روزانہ کی بنیاد پر ان سفاکوں کو منطقی انجام تک پہنچارہی ہے۔ پاکستان میں رہنے والے تمام مسلمانوں اور بالخصوص پختون قوم اور قبائل سے ہماری یہ درخواست ہے کہ یہ ’’ لاتوں کے بت باتوں سے نہیں مانتے ہیں‘‘ لہٰذا آپ سب لوگ تحریک طالبان پاکستان کا ساتھ دے کر اس ظالم بے حیا، اسلام اور مسلمانوں کے دشمن سے نجات حاصل کرنے کی کوشش کیجئے۔۔
ہم ہر موڑ میں تمہارا ساتھ دیں گے ان شاء اللہ
محمدخراسانی
مرکزی ترجمان تحریک طالبان پاکستان

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں